Home / پاکستان / عجب کرپشن کی غضب کہانی (حصہ اول

عجب کرپشن کی غضب کہانی (حصہ اول

رپورٹ*

*منور افتخار میڈیا سیل پیرمحل*ساہیوال نیوز

*عجب کرپشن کی غضب کہانی پیرمحل ہائی سکول نمبر 1کے سنیئر ہیڈ ماسٹر کی مبینہ ملی بھگت سے لاکھوں روپئے خورد برد اور اختیارات کا ناجائز استعمال* *کرنے پر محکمہ انٹی کرپشن اور محکمانہ انکوائریاں شروع گورنمنٹ ہائی سکول نمبر1 پیرمحل میں گھپلوں کا انکشاف بڑی مالی بے ضابطگیوں کو انکشاف ہوا ہے سینیئر ہیڈ ماسٹر سمیت* *دیگر عملہ سکول میں حاضر ہوئے بغیر ہی کئی ماہ سے تنخواہیں وصول کرتا رہا ہے جبکہ سی ای او ایجوکیشن ڈی او ایجوکیشن سرپرست نکلا ڈپٹی کمشنر ٹوبہ ٹیک سنگھ نے گریڈ بیس کے افسر کی سربراہی میں تین رکنی انکوائری کمیٹی بنادی شہری کی درخواست پر محکمہ اینٹی کرپشن نے بھی ڈپٹی ڈائریکٹر اینٹی کرپشن کے سربراہی میں انکوائری شروع کردی*
*گورنمنٹ ہائی سکول پیرمحل نمبر1 کا سینیئر ہیڈماسٹر کئی مہینوں سے سکول میں حاضر نہیں آتا مگر مہینے کی آخری *تاریخوں میں آکر پورے مہینے کی حاضری ایک ہی دن میں لگا لیتا ہے جس سے پورے مہینےکی تنخواہ بھی وصول کرتا ہے اور ان مہینوں کا ٹی اے ڈی اے بھی لے لیتا ہے جس کی وجہ سے*حکومت کو لاکھوں رویئے مہینہ ٹیکہ لگا دیتا ہے*
*جبکہ پچھلے چھ سات سال سے سائیکل سٹینڈ کی مد میں لاکھوں روپے خورد برد کر چکا ہے*
*سکول کے اندر کھانے پینے کی اشیاء کیلیئے غیرقانونی طریقے سے لگائی جانے والی ریڑھیوں سے روزانہ کی بنیاد پر ہزاروں روپے وصول کرتا رہا ہے جوکہ پچھلے چھ سات سالوں سے لاکھوں روپے بنتے ہیں*
*اسی طرح یہ سنیئر ہیڈ ماسٹر امتحانی مراکز کی مد میں ہر امتحان پر مختلف یونیورسٹیز اور کالجز کے سکول کے اندر منعقد کروائے جانے والے امتحانات کی مد میں سکول کے میں حاضر ہوئے بغیر بطور آر آئی لاکھوں وصول کرتا رہا ہے شہریوں کا ارباب اختیار سے اس کرپٹ لاپرواہ اور بد دیانت سنیئر ہیڈ ماسٹر جماعت علی ملہی اور اس کے حواریوں کو فوری طور پر محکمانہ کاروائی عمل میں لائی جائے*

*

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے