badar simab

پردیس میں سفیر دیس — آسمان سخن کا چاند — شاعربدر سیماب

چوھدری صابر رحمن (تحصیل نائب صدر پاکستان تحریک انصاف چیچہ وطنی)
میرا دوست “بدر سیماب” جو ان دنوں بسلسلہ ء روزگار کویت، میں مقیم ہے ہمارے گاؤں 39 بارہ۔ایل (خیر پور) کا فخر ہے اور شعر و ادب کے حوالے سے کویت سمیت دنیا بھر میں ہمارے شہر چیچہ وطنی کی پہچان ہے۔
ان کا اردو مجموعہ کلام ۔۔” تمہیں سوچا تمہیں چاہا ” ارباب نقد و نظر سے اپنی اہمیت منوا چکا ہے۔
بدر سیماب اردو کے ساتھ ساتھ پنجابی کے بھی بہترین شاعر ہیں ۔

کویت میں ہمہ وقت شعر و سخن کی ترقی اور ترویج کے لیے کوشاں رہتے ہیں ۔ کویت کی سب سے فعال اور بڑی ادبی تنظیم۔۔۔ “انجمن ارباب فکر و فن کویت ” نو منتخب صدر ہیں ۔ کویت میں مقامی اور عالمی مشاعروں اور ادبی بیٹھکوں کے انعقاد کے لیے ہمہ وقت کوشاں رہتے ہیں۔
بدر سیماب خود بھی کئی ممالک کے عالمی مشاعروں میں شرکت کر چکے ہیں ۔ بلا شبہ ان کی شعر و ادب کے لیے خدمات لائق صد تحسین ہیں ۔
کویت اور پاکستان کے پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا کے ساتھ ساتھ ریڈیو انٹرویوز اور مشاعروں میں شرکت کا شرف رکھتے ہیں ۔ اور دنیا بھر سے اعتراف فن کے کئی ایوارڈز بھی حاصل کر چکے ہیں ۔

مجھے اپنے دوست پر بجا طور پہ فخر ہے۔
ویسے تو “بدرسیماب” کی تمام شاعری باکمال اور کسی گلدستہ سے کم نہیں۔۔اسی گلدستے سے انکے کچھ اشعار پیش خدمت ہیں۔۔۔۔۔!!!!

ملتا نہیں ہے مجھ سے مگر رابطے میں ہے
آئے گا ایک روز ، ابھی راستے میں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کچھ پلٹ کر نہیں کہا میں نے
یہ مجھے مات ہو گئی ہے کیا؟

مجھ پہ کسنے لگے ہو آوازے۔۔
اتنی اوقات ہو گئی ہے کیا؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنی جنگ میں آپ لڑا تھا
یار تو کوفے والے نکلے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب کے برس بھی جب ہوئی تقسیم روشنی
ہم کو ہمارے حصے کے جگنو نہیں ملے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شہد تھا پہلے جو بھی رشتہ آخرکار وہ نیم ہوا
پہلے گھر تقسیم ہوا تھا پھر میں بھی تقسیم ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تُو تو بازار عداوت میں بھی کھوٹا نکلا
میرے دشمن تُو مری سوچ سے چھوٹا نکلا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب کسی اور کی جانب بھی اشارہ جائے
ہم کو ہر بار نہ مقتل سے پکارا جائے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک لشکر ابھی مقابل ہے
تیر بھی آخری کمان میں ہے
مجھ کو میں بھی یہاں نہیں ملتا
کون رہتا مرے مکان میں ہے ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں جو خاموش تھا صحرا کا بدن اوڑھے ہوئے
کس قدر شور مری ذات کے اندر نکلا
اپنا دامن میں زلیخا سے بچا لایا ہوں
میں وہ یوسف ہوں جو قسمت کا سکندر نکلا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شمار اس کا کبھی تو کر امیر شہر فرصت میں
کہ کتنے لوگ ٹوٹے ہیں تمہارا گھر بنانے میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غریب شہر ہیں لیکن! بڑا معیار رکھتے ہیں
ہمارا سر نہیں باقی ، مگر دستار رکھتے ہیں
بہت حیران ہیں گھر میں، ہوائیں کیوں نہیں آتیں
نہ کوئی در ہی باقی ہے، نہ ہم دیوار رکھتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کس جہاں میں یہ کام کر بیٹھے
معذرت ! ہم کلام کر بیٹھے
ہم کو کوفہ بھی کب میسر تھا
ہم جو کربل میں شام کر بیٹھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تُو بتا! ہجر کے موسم جو گزارے تُو نے
میرے چہرے پہ تو حالات نے صدیاں لکھ دیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔
یہی ملنے کی صورت ہے تو رہنے دے
محبت گر ضرورت ہے تو رہنے دے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دکھی دلوں کی دوا ہے خدا جسے دے دے
غم حسین عطا ہے خدا جسے دے دے
۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں اپنے وسیب کے اس چمکتے ہووے ستارے کے لیے دعاگو ہوں۔اللہ کریم انہیں اردو ادب میں وہ مقام دے کہ جس کی پیاس میں نے بدر سیماب کی شاعری میں محسوس کی ہے۔۔۔۔۔۔!!!

اپنا تبصرہ بھیجیں